سافٹ ڈرنکس کل کی بجائے آج ہی ترک کر دیں، ورنہ...

سافٹ ڈرنکس کل کی بجائے آج ہی ترک کر دیں، ورنہ…

امریکی ماہرین صحت نے کہا ہے کہ سافٹ ڈرنک کے بے تحاشا استعمال سے تولیدی صحت شدید متاثر ہوتی ہے، جو لوگ روزانہ کی بنیاد پر میٹھے سوڈے کے مشروبات استعمال کرتے ہیں ان میں والد بننے کی صلاحیت کم جبکہ خواتین میں ماں بننے کا امکان معدوم ہوتا جاتا ہے۔ بوسٹن یونیورسٹی سکول آف پبلک ہیلتھ کے سائنس دانوںکی تحقیق سے معلوم ہوا ہے کہ مردوں اور عورتوں پر ان کے طرز زندگی اور غذائیت کا اثرات مرتب ہوتے ہیں جو ان کے والدین بننے پر بھی اثر انداز ہوتے ہیں۔
گزشتہ 50 برس میں عام امریکیوں کے شکر کھانے میں غیرمعمولی اضافہ ہوا جس میں سے ایک تہائی اضافے کی وجہ میٹھے کاربونیٹڈ مشروبات ہیں۔ سافٹ ڈرنکس کا اندھا دھند استعمال امریکیوں کا وزن بڑھا اور ذیابیطس کی وجہ بھی بن رہا ہے ۔ جدید تحقیق کیلئے ماہرین صحت نے 21 سے 45 سال کی 3,828 خواتین اور ان کے شوہروں کو اس سروے میں شامل کیا جن کا تعلق امریکا اور کینیڈا سے تھا۔
اس سروے میں ان کے طرز زندگی، غذا اور میڈیکل ریکارڈ دیکھا گیا۔ ان میں خواتین سے ہر دو ماہ بعد ایک سوال نامہ بھروایا گیا اور ان سے حاملہ ہونے کے بارے میں بھی پوچھا گیا اور کل 12 ماہ تک ان خواتین کا جائزہ لیا گیا۔ ماہرین نے سروے کے آخر میں ڈیٹا کا جائزہ لیتے ہوئے کہا کہ خواہ مرد ہو یا عورت اگر وہ سافٹ ڈرنک کی زائد مقدار پیتے ہیں تو ماہانہ بنیادوں پر ان کے والدین بننے کا امکان 20 فیصد تک کم ہوجاتا ہے۔
جن خواتین نے روزانہ ایک گلاس سافٹ ڈرنک پی ان میں ماہانہ بنیادوں پر حمل ٹھہرنے کا امکان 25 فیصد تک کم نوٹ کیا گیا۔ مردوں میں یہ شرح 33 فیصد تک نوٹ کی گئی۔ جن خواتین و حضرات نے سافٹ ڈرنک استعمال نہیں کی ان میں یہ شرح کم دیکھی گئی ۔ ڈاکٹروں نے عندیہ دیا ہے کہ ان کی تحقیقات کو ایک طرح کا انتباہ سمجھا جائے کیونکہ اس میں شریک افراد کی تعداد بہت کم ہے۔ ڈاکٹروں کا اصرار ہے کہ سافٹ ڈرنک سے تولیدی صحت شدید متاثر ہوتی ہے اس لیے میٹھے سوڈا سے دور رہنا ہی بہتر ہے

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں